Saeed Aasi is a famous journalist, columnist, poet, writer, Trade Union Leader and a social worker. He was born in the city of famous saint BABA FAREED GUNJ SHAKKAR, Pakpattan Sharif (province of Punjab Pakistan) on August 24, 1954 at Muhallah Peer Kariaan. He inherited the literary sense from his father Ch. Muhammad Akram (Late) who was a land record officer by profession but fond of Urdu and Persian literature. His grandfather Mulvi Abdul Kareem (Late) was an official Islamic Scholar for Issuing legal opinion or ruling in District Sahiwal. Whole of their family got influenced from their father and chosen literature and media as profession. Mr. Tanveer Sahir, his younger brother is also working for media. Mr. Saeed Aasi is leading a happy marital life with his first cousin Samina Saeed and has 4 sons (Shahid Saeed, Shoaib Saeed, Shahbaz Saeed & Salman Saeed) and 2 daughters (Shazia Saeed & Sumaira Saeed). His children also have a family influence and working for the promotion and development of literature and media.

He got his early education from Government Primary School Ghalla Mandi Pakpattan, he had completed his Matriculation in 1969 from Government High School Pakpattan. He was a very intelligent and disciplined student and was well known among his teachers. After intermediate from Government Faridia College Pakpattan in 1971 he felt a passion about getting more studies, travelled to Sahiwal and completed his graduation from Government College Sahiwal in 1974.

He had a plan to be an Economist but didn't go for studying Economics in Master due to his father's wish of making him a Lawyer and for that he referred him to the Punjab University Law College for L.L.B. He passed his L.L.B exam in 1977 but he did not adopted Law as a profession rather continued his services as a Journalist, in 1980 he practiced law in city court Pakpattan for few months only.

His potential as a writer/poet got unveiled during his intermediate when while taking his examination of Urdu he prosify the whole paper in a well poetic sense and got distinction in the class. His teachers also made an announcement that this boy would get "Fame in the world of Literature". This event made him realized his literary abilities and he started giving more time and efforts to his literature which made him well recognized during his graduation period. Initially he wrote Urdu literature only but later on he entered into Punjabi literature also and proved himself equally good in it. Most of his writings were published in college magazine Sahiwal and then he became the Vice President of College Literary organisation "Punjabi Adabi Sangat".

During his law studies he has started a magazine named "STUDENT" which was literary addition and was popular among students and the teachers of the University Law College. That magazine couldn't be continued after 4th addition due to the shortage of funds he was then elected as an editor for College magazine "Al Meezan" after "STUDENT" and also worked for part time in Daily Wifaq as Sub Editor, during that period.

Literature was his passion since his childhood and expression was being his urge he decided to become a lecturer. He has very sensitive and loyal emotions for the development of national languages so he was being participating in literature development since youth. He also helps other students in understanding literature, during his studies in Faridia College Pakpattan; Literacy awareness was firmed in him. Family circumstances helped him discovering a poet inside him. Government College Sahiwal provided him wide opportunities to flourish his creative abilities. College's library served as his home; he was mostly interested in literature and poetry. He studied Parem Chand, Gulam Abbas, Khawaja Ahmed Abbas, Asmat Chugtai, Saadat Hassan Minto, Karshan Chandar and Ahmed Nadeem Qasmi. His interest in study gave him access to classical poets like Ghalib, Meer Taqi Meer, Hali, Iqbal, Sooda, Josh, Firaq Gorakh Puri, in addition to famous poets Faiz, Sahir Ludhianvi, Ahmed Nadeem Qasmi, Ahmed Faraz, Habib Jalib, Musheer Kazmi, Nasir Kazmi, Sagar Siddiqui, Abdul Hameed Addam, Zafar Iqbal.

He got a lot of inspiration from Sahir Ludhianvi and Nasir Kazmi but there was a time when Shorash Kasmiri, Mirza Adeeb and Ehsan Danish were also on his mind, while reading their poetry and thought provoking articles his spirit awakened and he learnt the style of holding the pen. He entered into Journalism after Graduation when he appointed as a correspondent in Pakpattan in PIP news agency. Later on he explored the field of writing the poetry and short story and became successful. His poetry and stories were published in Adaab Arz monthly magazine from where he was considered the popular writer of that Magazine. Along with Urdu literature he thought about contributing for his mother language and even during his Law studies he started working for Punjabi Literature and was promoted by the fellow persons. His Punjabi poetry and stories were frequently being published in Punjdariya, Waris Shah, Saanjhan, Takhleeq, Suraj Mukhi, Wangaar and daily Imroz. He had also translated some poems of Lord Bryan, Shelley and John Kats in Urdu and Punjabi. He also started regular Journalism with Daily Wifaq as Sub Editor during his journey to News Editor. In 1977 He joined Daily Azad as Staff reporter and appointed as a High Court beat reporter. He also started writing his column Sargoshian for editorial page. He enjoyed the Journalism during that short period his salary was fixed 650 only and within a month it was increased to 850. He joined Daily Jang Lahore for a short time and luckily got an opportunity in Daily Nawa-i-Waqt which was his dream that Newspaper to work with he was appointed on 6th September 1981 as Sub Editor where he spent his whole career with full devotion. He has started his duty with Nawa-i-Waqt news desk later on he become in-charge of city page and then he moved to Magazine section where he has fulfilled his responsibilities as in-charge of 4 editions. From Magazine section he has been moved to the reporting section and in this section he worked as staff reporter, senior staff reporter, Deputy Chief Reporter and Chief Reporter. During his service in Daily Nawa-i-Waqt he never demanded any specific section or specific beat. For a long time he have done the beats of High Court, supreme court along with political reporting specially opposition Alliences MRD, PDF, Awami Itehad, and ARD, and then Civil Secretariat and Punjab Assembly beats stayed with him for long time. At-least for more than 28 years he has done court reporting, which is a recorded in the world of Journalism. For more than 12 years he is being writing column "Bethak" in daily Nawa-i-Waqt regularly, and the political dairies. Currently he is working as Deputy Editor in Daily Nawa-i-Waqt and is writing the editorial along with his regular column "Bethak".

Extra Professional Activities:

  1. Secretary Lahore High Court Reporters Association, 1977-1978.
  2. Secretary Lahore Press Club, 1984-1986.
  3. Vice President Pakistan Federal Union of Journalists, 1987.
  4. President Punjab Assembly Press Gallery Committee, 1996, 1997, 1999.
  5. President Punjab Union of Journalists (PUJ) 1998-1999.
  6. President Pakistan Federal Union of Journalists(PFUJ) 2002-2004.

Social & Human Rights Activities:
  1. President Sabzazar Welfare Society 1998 till date.
  2. Member Lahore High Court Jail and Hospitals Reforms Committee 2000 till date.
  3. Member Human Rights Commission Government of Punjab. 2001-2002.

Achievements in Urdu and Punjabi Literature:

  1. President Gunj Shakar Academy since 1988 to date.
  2. Member Academy of Letters Pakistan.
  3. Member Pakistan Writers Guild.
  4. Author of 5 Literary Books:
    1. Soch Sumandar (Punjabi Poetry, 1990).
    2. Aagey Morr Judai Ka Tha (China Travelogue, 1996).
    3. Jazeera Jazeera (Indonesia, Brunei & Maldives Travelogue, 1999).
    4. Ramzaan (Punjabi Poetry, 2005).
    5. Tere Dukh Bhi Mere Dukh Hain (Urdu Poetry, 2008).
  5. More Than Three Thousands Columns and Political Diaries published in Daily Nawa-i-Waqt.
  6. Urdu, Punjabi Fiction Writer.

اردو اور پنجابی ادب میں کارکردگی:

  1. صدر گنج شکر اکیڈمی 1988 سے اب تک
  2. ممبر اکیڈمی آف لیٹرز پاکستان
  3. ممبر پاکستان رائیٹرز گلڈ
  4. 5 ادبی کتابوں کے مصنف:
    1. سوچ سمندر (پنجابی شاعری، 1990)
    2. آگے موڑ جدائی کا تھا (سفر نامہ چین، 1996)
    3. جزیرہ جزیرہ (سفر نامہ انڈونیشا، برونائی اور مالدیب، 1999)
    4. رمزاں ( پنجابی شاعری، 2005).
    5. تیرے دکھ بھی میرے دکھ ہیں (اردو شاعری، 2008)
  5. تین ہزار سے زائید کالم اور سیاسی ڈائیریاں روزنامہ نوائے وقت میں شائع ہو چکی ہیں
  6. اردو، پنجابی تصورارتی کہانیوں کے مصنف

اضافی پیشہ ورانہ سرگرمیاں:

  1. سیکریٹری لاہور ہائی کورٹ رپورٹرز ایسوسی ایشن، 1977-1978
  2. سیکریٹری لاہور پریس کلب، 1984-1986.
  3. نائب صدر پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلیسٹس، 1987
  4. صدر پنجاب اسمبلی پریس گیلری کمیٹی، 1996، 1997 - 1999
  5. صدر پنجاب یونین آف جرنلیسٹس (پی ایف یو جے)، 1998-1999
  6. صدر پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس (پی ایف یو جے)، 2002-2004
سماجی اور انسانی حقوق کی سرگرمیاں:
  1. صدر سبزہ زار ویلفیر سوسائیٹی 1998 سے اب تک
  2. ممبر لاہور ہائی کورٹ جیل اینڈ ہاسپٹل ریفارمز کمیٹی 2000 سے اب تک
  3. ممبر ہیومن رائیٹس کمیشن گورنمنٹ آف پنجاب۔ 2001-2002

مستقبل کی اصل منصوبہ بندی تو لیکچرار بننے کی تھی۔ ادب سے بچپن ہی سے لگاؤ تھا۔ فریدیا کالج پاکپتن میں تعلیم کے دوران شعور میں کافی پختگی آ گئی تھی۔ گھر کےماحول کی گھٹن اظہار کا ذریعہ تلاش کر رہی تھی چناچہ حالات نے شاعر بنا دیا۔ گورنمنٹ کالج ساہیوال میں تخلیقی صلاحیتوں کی نشونما کا خوب موقع ملا۔ کالج کی لائبریری مسکن بن گئی زیادہ لگاؤ ادب اور شاعری کی کتابوں سے رہا۔ اسی لائبریری میں منشی پریم چند، غلام عباس، خواجہ احمد عباس، عصمت چغتائی، سعادت حسن منٹو، کرشن چندر اور احمد ندیم قاسمی سمیت کم و بیش ہر افسانہ نگار کی تمام دستیاب کتابیں پڑھ ڈالیں۔ شوق مطالعہ نے غالب، میر تقی میر، حالی، اقبال، سودا، جوش، فراق گورکھ پوری جیسے کلاسیکل شاعروں کے علاوہ فیض، سحر لدھیانوی، احمد ندیم قاسمی، احمد فراز، حبیب جالب، مشیر کاظمی، ناصر کاظمی، ساغر صدیقی، عبدالحمیدعدم، ظفر اقبال جیسے اس وقت کے مشہور شاعروں تک بھی رسائی کرادی۔ بس پھر شوق نے بھی مہلت نہ دی ٹھہرنے کی۔

 سب سے زیادہ ساحر لدھیانوی اور ناصر کاظمی متاثر کرتے تھےپھر ایک دور میں شورش کاشمیری، مرزا ادیب اور احسان دانش دل و دماغ پر چھائے رہے۔ ان سب کی تحریریں پڑھتے پڑھتے قلم پکڑنے کا سلیقہ آ گیا۔ گریجویشن کےامتحان سے فارغ ہونے کے بعد ایک اخبار "پی آئی پی" میں درخواست بھیج دی اور پاکپتن میں نامہ نگار مقرر ہو ۓ۔ یہ صحافت کی دنیا میں پہلا قدم تھا۔ باقاعدہ شاعری اور افسانہ نگاری بھی شروع کردی جو ماہانہ "آداب عرض" میں شائع ہوتی تھیں۔ آداب عرض کے مقبول قلم کاروں میں شمار رہا۔ لاء کی تعلیم کے دوران پنجابی ادب میں معروفیت والا مقام حاصل ہو چکا تھا۔ پنجدریا، وارث شاہ، سانجھاں، تخلیق، سورج مکھی، ونگار اور روزنامہ امروز کے پنجابی ادبی اڈیشن میں غزلیں اور کہانیاں تواتر کے ساتھ شائع ہوتی رہیں۔ گریجویشن کے دوران لارڈبائرن، شیلے اور جان کیٹس کی بعض نظموں کے اردو، پنجابی منظوم ترجمے بھی کیۓ۔ قلم کی مزدوری کی جانب زیادہ میلان ہوا اور لاء کی تعلیم کےدوران روزنامہ وفاق سے صحافت کا باقاعدہ آغاز کر دیا۔ روزنامہ وفاق میں سب ایڈیٹر سے نیوز ایڈیٹر کے منصب تک کام کیا۔ 1977 میں پہلی بار بطور سٹاف رپورٹر روزنامہ آزاد کے ساتھ منسلک ہوۓ اور ہائیکورٹ رپورٹنگ حصہ میں آئی۔ اس کے ساتھ ہی کالم سرگوشیاں بھی شروع کر دیا۔ اخبار کا فرنٹ بیک ان کی خبروں سے بھرا ہوتا تھا اور ادارتی صفحے پر کالم سرگوشیاں بھی موجود ہوتا تھا ۔ صحافت کرنے کا مزہ اس مختصر دور میں آیا تنخواہ چھ سو روپے مقرر ہوئی مگر پہلے ہی مہینے دو سو روپے کا اضافہ کردیا گیا۔.

جنگ کا باقاعدہ آغاز ہوا تو وفاق چھوڑ کر جنگ کے دفتر میں آ گئے، جنگ کے ماحول میں بمشکل ایک ہفتہ ہی گزر سکا۔ نواۓ وقت میں ملازمت کی پہلےہی درخوست دے رکھی تھی اور نواۓ وقت میں جانا ایک خواب تھا جس کی تعبیر ڈھونڈنےمیں پہلے دو بار ناکامی بھی ہو چکی تھی۔ نواۓ وقت کی جانب سے انٹرویو کا خط موصول ہوا، 6 ستمبر 1981 کو توصیف احمد خان نے انٹرویو میں کلئیر کر دیا اور اسی روز بطور سب ایڈیٹر کام شروع کردیا اور آج تک اس ادارے سے منسلک ہیں۔ شروع میں نواۓ وقت ڈیسک پر ذمہ داری ملی بعد میں سٹی پیج کے انچارج مقرر ہوۓ اور پھر میگزین سیکشن ميں ٹرانسفر کر دیا گیا جہاں بطورانچارج چار ایڈیشنز کی ذمہ داری بخوبی نبھائی۔ میگزین سیکشن سے رپورٹنگ سیکشن بھیجا گیا جہاں سٹاف رپورٹر، سینئر سٹاف رپورٹر ، ڈپٹی چیف رپورٹراور چیف رپورٹر کے عہدوں پر اپنی ذمہ داری بخوبی نبھائی۔ نواۓ وقت میں سروس کے دوران کبھی کسی خاص سیکشن کی خواہش نہیں کی اور نہ ہی رپورٹنگ سیکشن میں کبھی کسی خاص بیٹ کا مطالبہ کیا بلکہ جہاں ضروت ہوتی وہاں بھیج دیا جاتا۔ ایک طویل عرصہ تک ہائی کورٹ، سپریم کورٹ کے ساتھ ساتھ پولیٹیکل بیٹ کی بالخصوص اپوزیشن جماعتوں ایم آر ڈی، پی ڈی ایف، آوامی اتحاد اور اے آر ڈیکی  بیٹ اور پھر سول سیکرٹریٹ اور پنجاب اسمبلی کی بیٹ کافی عرصہ تک پاس رہی۔ کم و بیش گزشتہ 28 سال سے مسلسل کورٹ رپورٹنگ کی جو صحافت کی دنیا میں ایک ریکارڈ ہے۔ نواۓ وقت میں مسلسل دس سال سے کالم (بیٹھک) لکھنے کا سلسلہ بھی جاری ہے اسی اخبار کے سیاسی ایڈیشن افق میں پندرہ سال تک مسلسل سیاسی ڈائری لکھی۔  ابھی بھی روزنامہ نواۓ وقت کے ساتھ بطور ڈپٹی ایڈیٹر اپنی ذمہ داری نبھا رہے ہیں اور ساتھ ساتھ نواۓ وقت ایڈیٹوریل بھی باقاعدگی سے لکھ رہے ہیں۔

سعید آسی ایک مشہور صحافی، کالم نگار، شاعر،ادیب اور ایک سوشل ورکر ہیں۔ آپ 24 اگست 1954 کو محلہ پیر کریاں پاکپتن شریف ضلع پنجاب پاکستان میں پیدا ہوۓ۔ آپ کے والد چوہدری محمد اکرم (مرحوم) محکمہ مال میں پٹواری تھے۔ والدصاحب کو اردو اور فارسی ادب سے کافی لگاؤ تھا۔ والد کا 6 اگست 1985 میں انتقال ہو گیاتھا۔ آپ کے دادہ مولوی عبدالکریم (مرحوم) ضلع ساہیوال میں سرکاری طور پر فتوی جاری کرنے والے عالم دین تھے۔ آپکی والدہ 9 مارچ 1998 کو انتقال کر گئی تھیں۔ آپکے تین بھائی اوردو بہنیں ہیں۔ دو بھائی رفیق زیدی اور نوید سیلانی سرکاری سروس میں ہیں اور سب سے چھوٹا بھائی تنویر ساحر پاکپتن میں پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کی نمائندگی کر رہا ہے۔

آپ نے ابتدائی تعلیم گورنمنٹ پرائمری سکول غلہ منڈی پاکپتن سے حاصل کی، آپ نے گورنمنٹ ہائی سکول پاکپتن سے 1969 میں میٹرک کا امتحان پاس کیا۔ آپ بہت اچھے طالبعلم تھے اورسکول کے اساتذہ اور طالبعلموں میں ایک اچھا رتبہ حاصل کیا۔ انٹرمیڈ یٹ کا امتحان گورنمنٹ فریدیا کالج پاکپتن سے 1971 میں پاس کیا۔ فریدیا کالج میں پڑھائی کے دوران ہی ادبی ذوق نے نشونما پائی، بارہویں جماعت کے نوماہی امتحان میں اردو کا پرچہ فی البدیہہ شعروں کی صورت میں حل کیا۔ اس پرچے پر نہ صرف سب سے زیادہ نمبر دیئے گئے بلکہ اساتذہ نے یہ نوید بھی سنا دی کہ یہ لڑکا ادب میں بہت بڑا مقام حاصل کرے گا۔

آپ نے گریجویشن گورنمنٹ کالج ساہیوال سے 1974 میں کی۔ بطور شاعر ادیب آپ کی  پہچان گورنمنٹ کالج ساہیوال ہی میں ہوئی ۔ شروع میں صرف اردو ادب میں ہی لکھا مگربعد ميں پنجابی ادب بھی شروع کردیا اور پورے کالج کا مستند پنجابی شاعر بن گئے ۔ کالج میگزین "ساہیوال" میں سب سے زیادہ آپ کی پنجابی تحریریں شائع ہوتی تھيں، اسکے علاوہ گورنمنٹ کالج ساہیوال کی پنجابی ادبی سنگت کے نائب صدر بھی منتخب ہوۓ۔

آپ کا ارادہ تو اردو یا اکنامکس میں ایم اے کرنے کا تھا، لیکن آپ کے والد آپ کو وکیل بنانا چاہتے تھے جسکے لیۓ انہوں نے آپ کو پنجاب یونیورسٹی لاء کالج بھجوا دیا۔ لاء کی تعلیم کے دوران آپ نے ایک رسالہ سٹوڈنٹ کے نام سے شروع کیا، لیکن مالی حلات کا بنا پر رسالے کو چوتھے ایڈشن کے بعد ہی بند کرنا پڑا۔ رسالے سٹوڈنٹ کی وجہ سے کالج میں آپ آسانی سے پہچانے جانے لگے تھے۔ آپ کالج کے میگزین "المیزان" کے ایڈیٹر بھی منتخب ہوۓ۔ آپ نے لاء کی تعلیم 1977 میں مکمل کر لی تھی مگر لاء کو بطور پیشہ اختیار نہ کیا، 1980 میں ایک دوست کے اکسانے پر پاکپتن شریف میں کچھ ماہ تک وکالت کی۔

آپ کی شادی 1980 میں اپنی خالہ زاد ثمینہ سعید سے ہوئی اورآپ کے چار بیٹے ( شاہد سعید، شعیب سعید، شہباز سعید اور سلمان سعید) اور دو بیٹیاں ( شازیہ سعید اور سمیرا سعید) ہیں۔

    Bookmark and Share   
       Copyright © 2010-2011 Saeed Aasi - All Rights Reserved